اللہ کے نام سے جو رحمان و رحیم ہے بِسْمِ ٱللَّهِ ٱلرَّحْمَٰنِ ٱلرَّحِيمِ
اے اوڑھ لپیٹ کر لیٹنے والے يَٰٓأَيُّهَا ٱلْمُدَّثِّرُ۝۱
اٹھو اور خبردار کرو قُمْ فَأَنذِرْ ۝۲
اور اپنے رب کی بڑائی کا اعلان کرو وَرَبَّكَ فَكَبِّرْ ۝۳
اور اپنے کپڑے پاک رکھو وَثِيَابَكَ فَطَهِّرْ ۝۴
اور گندگی سے دور رہو وَٱلرُّجْزَ فَٱهْجُرْ ۝۵
اور احسان نہ کرو زیادہ حاصل کرنے کے لیے وَلَا تَمْنُن تَسْتَكْثِرُ ۝۶
اور اپنے رب کی خاطر صبر کرو وَلِرَبِّكَ فَٱصْبِرْ ۝۷
اچھا، جب صور میں پھونک ماری جائے گی فَإِذَا نُقِرَ فِى ٱلنَّاقُورِ ۝۸
وہ دن بڑا ہی سخت دن ہوگا فَذَٰلِكَ يَوْمَئِذٍ يَوْمٌ عَسِيرٌ ۝۹
کافروں کے لیے ہلکا نہ ہوگا عَلَى ٱلْكَٰفِرِينَ غَيْرُ يَسِيرٍ ۝۱۰
چھوڑ دو مجھے اور اُس شخص کو جسے میں نے اکیلا پیدا کیا ہے ذَرْنِى وَمَنْ خَلَقْتُ وَحِيدًا ۝۱۱
بہت سا مال اُس کو دیا وَجَعَلْتُ لَهُۥ مَالًا مَّمْدُودًا ۝۱۲
اس کے ساتھ حاضر رہنے والے بیٹے دیے وَبَنِينَ شُهُودًا ۝۱۳
اور اس کے لیے ریاست کی راہ ہموار کی وَمَهَّدتُّ لَهُۥ تَمْهِيدًا ۝۱۴
پھر وہ طمع رکھتا ہے کہ میں اسے اور زیادہ دوں ثُمَّ يَطْمَعُ أَنْ أَزِيدَ ۝۱۵
ہرگز نہیں، وہ ہماری آیات سے عناد رکھتا ہے كَلَّآ ۖ إِنَّهُۥ كَانَ لِءَايَٰتِنَا عَنِيدًا ۝۱۶
میں تو اسے عنقریب ایک کٹھن چڑھائی چڑھواؤں گا سَأُرْهِقُهُۥ صَعُودًا ۝۱۷
اس نے سوچا اور کچھ بات بنانے کی کوشش کی إِنَّهُۥ فَكَّرَ وَقَدَّرَ ۝۱۸
تو خدا کی مار اس پر، کیسی بات بنانے کی کوشش کی فَقُتِلَ كَيْفَ قَدَّرَ ۝۱۹
ہاں، خدا کی مار اُس پر، کیسی بات بنانے کی کوشش کی ثُمَّ قُتِلَ كَيْفَ قَدَّرَ ۝۲۰
پھر (لوگوں کی طرف) دیکھا ثُمَّ نَظَرَ ۝۲۱
پھر پیشانی سیکڑی اور منہ بنایا ثُمَّ عَبَسَ وَبَسَرَ ۝۲۲
پھر پلٹا اور تکبر میں پڑ گیا ثُمَّ أَدْبَرَ وَٱسْتَكْبَرَ ۝۲۳
آخرکار بولا کہ یہ کچھ نہیں ہے مگر ایک جادو جو پہلے سے چلا آ رہا ہے فَقَالَ إِنْ هَٰذَآ إِلَّا سِحْرٌ يُؤْثَرُ ۝۲۴
یہ تو یہ ایک انسانی کلام ہے إِنْ هَٰذَآ إِلَّا قَوْلُ ٱلْبَشَرِ ۝۲۵
عنقریب میں اسے دوزخ میں جھونک دوں گا سَأُصْلِيهِ سَقَرَ ۝۲۶
اور تم کیا جانو کہ کیا ہے وہ دوزخ؟ وَمَآ أَدْرَىٰكَ مَا سَقَرُ ۝۲۷
نہ باقی رکھے نہ چھوڑے لَا تُبْقِى وَلَا تَذَرُ ۝۲۸
کھال جھلس دینے والی لَوَّاحَةٌ لِّلْبَشَرِ ۝۲۹
انیس کارکن اُس پر مقرر ہیں عَلَيْهَا تِسْعَةَ عَشَرَ ۝۳۰
ہم نے دوزخ کے یہ کارکن فرشتے بنائے ہیں، اور ان کی تعداد کو کافروں کے لیے فتنہ بنا دیا ہے، تاکہ اہل کتاب کو یقین آ جائے اور ایمان لانے والوں کا ایمان بڑھے، اور اہل کتاب اور مومنین کسی شک میں نہ رہیں، اور دل کے بیمار اور کفار یہ کہیں کہ بھلا اللہ کا اِس عجیب بات سے کیا مطلب ہو سکتا ہے اِس طرح اللہ جسے چاہتا ہے گمراہ کر دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے ہدایت بخش دیتا ہے اور تیرے رب کے لشکروں کو خود اُس کے سوا کوئی نہیں جانتا اور اس دوزخ کا ذکر اِس کے سوا کسی غرض کے لیے نہیں کیا گیا ہے کہ لوگوں کو اس سے نصیحت ہو وَمَا جَعَلْنَآ أَصْحَٰبَ ٱلنَّارِ إِلَّا مَلَٰٓئِكَةً ۙ وَمَا جَعَلْنَا عِدَّتَهُمْ إِلَّا فِتْنَةً لِّلَّذِينَ كَفَرُوا۟ لِيَسْتَيْقِنَ ٱلَّذِينَ أُوتُوا۟ ٱلْكِتَٰبَ وَيَزْدَادَ ٱلَّذِينَ ءَامَنُوٓا۟ إِيمَٰنًا ۙ وَلَا يَرْتَابَ ٱلَّذِينَ أُوتُوا۟ ٱلْكِتَٰبَ وَٱلْمُؤْمِنُونَ ۙ وَلِيَقُولَ ٱلَّذِينَ فِى قُلُوبِهِم مَّرَضٌ وَٱلْكَٰفِرُونَ مَاذَآ أَرَادَ ٱللَّهُ بِهَٰذَا مَثَلًا ۚ كَذَٰلِكَ يُضِلُّ ٱللَّهُ مَن يَشَآءُ وَيَهْدِى مَن يَشَآءُ ۚ وَمَا يَعْلَمُ جُنُودَ رَبِّكَ إِلَّا هُوَ ۚ وَمَا هِىَ إِلَّا ذِكْرَىٰ لِلْبَشَرِ ۝۳۱
ہرگز نہیں، قسم ہے چاند کی كَلَّا وَٱلْقَمَرِ ۝۳۲
اور رات کی جبکہ وہ پلٹتی ہے وَٱلَّيْلِ إِذْ أَدْبَرَ ۝۳۳
اور صبح کی جبکہ وہ روشن ہوتی ہے وَٱلصُّبْحِ إِذَآ أَسْفَرَ ۝۳۴
یہ دوزخ بھی بڑی چیزوں میں سے ایک ہے إِنَّهَا لَإِحْدَى ٱلْكُبَرِ ۝۳۵
انسانوں کے لیے ڈراوا نَذِيرًا لِّلْبَشَرِ ۝۳۶
تم میں سے ہر اُس شخص کے لیے ڈراوا جو آگے بڑھنا چاہے یا پیچھے رہ جانا چاہے لِمَن شَآءَ مِنكُمْ أَن يَتَقَدَّمَ أَوْ يَتَأَخَّرَ ۝۳۷
ہر متنفس، اپنے کسب کے بدلے رہن ہے كُلُّ نَفْسٍۭ بِمَا كَسَبَتْ رَهِينَةٌ ۝۳۸
دائیں بازو والوں کے سوا إِلَّآ أَصْحَٰبَ ٱلْيَمِينِ ۝۳۹
جو جنتوں میں ہوں گے وہاں وہ، فِى جَنَّٰتٍ يَتَسَآءَلُونَ ۝۴۰
مجرموں سے پوچھیں گے عَنِ ٱلْمُجْرِمِينَ ۝۴۱
"تمہیں کیا چیز دوزخ میں لے گئی؟" مَا سَلَكَكُمْ فِى سَقَرَ ۝۴۲
وہ کہیں گے "ہم نماز پڑھنے والوں میں سے نہ تھے قَالُوا۟ لَمْ نَكُ مِنَ ٱلْمُصَلِّينَ ۝۴۳
اور مسکین کو کھانا نہیں کھلاتے تھے وَلَمْ نَكُ نُطْعِمُ ٱلْمِسْكِينَ ۝۴۴
اور حق کے خلاف باتیں بنانے والوں کے ساتھ مل کر ہم بھی باتیں بنانے لگتے تھے وَكُنَّا نَخُوضُ مَعَ ٱلْخَآئِضِينَ ۝۴۵
اور روز جزا کو جھوٹ قرار دیتے تھے وَكُنَّا نُكَذِّبُ بِيَوْمِ ٱلدِّينِ ۝۴۶
یہاں تک کہ ہمیں اُس یقینی چیز سے سابقہ پیش آ گیا" حَتَّىٰٓ أَتَىٰنَا ٱلْيَقِينُ ۝۴۷
اُس وقت سفارش کرنے والوں کی سفارش ان کے کسی کام نہ آئے گی فَمَا تَنفَعُهُمْ شَفَٰعَةُ ٱلشَّٰفِعِينَ ۝۴۸
آخر اِن لوگوں کو کیا ہو گیا ہے کہ یہ اِس نصیحت سے منہ موڑ رہے ہیں فَمَا لَهُمْ عَنِ ٱلتَّذْكِرَةِ مُعْرِضِينَ ۝۴۹
گویا یہ جنگلی گدھے ہیں كَأَنَّهُمْ حُمُرٌ مُّسْتَنفِرَةٌ ۝۵۰
جو شیر سے ڈر کر بھاگ پڑے ہیں فَرَّتْ مِن قَسْوَرَةٍۭ ۝۵۱
بلکہ اِن میں سے تو ہر ایک یہ چاہتا ہے کہ اُس کے نام کھلے خط بھیجے جائیں بَلْ يُرِيدُ كُلُّ ٱمْرِئٍ مِّنْهُمْ أَن يُؤْتَىٰ صُحُفًا مُّنَشَّرَةً ۝۵۲
ہرگز نہیں، اصل بات یہ ہے کہ یہ آخرت کا خوف نہیں رکھتے كَلَّا ۖ بَل لَّا يَخَافُونَ ٱلْءَاخِرَةَ ۝۵۳
ہرگز نہیں، یہ تو ایک نصیحت ہے كَلَّآ إِنَّهُۥ تَذْكِرَةٌ ۝۵۴
اب جس کا جی چاہے اس سے سبق حاصل کر لے فَمَن شَآءَ ذَكَرَهُۥ ۝۵۵
اور یہ کوئی سبق حاصل نہ کریں گے الا یہ کہ اللہ ہی ایسا چاہے وہ اس کا حق دار ہے کہ اُس سے تقویٰ کیا جائے اور وہ اس کا اہل ہے کہ (تقویٰ کرنے والوں کو) بخش دے وَمَا يَذْكُرُونَ إِلَّآ أَن يَشَآءَ ٱللَّهُ ۚ هُوَ أَهْلُ ٱلتَّقْوَىٰ وَأَهْلُ ٱلْمَغْفِرَةِ ۝۵۶