اللہ کے نام سے جو رحمان و رحیم ہے بِسْمِ ٱللَّهِ ٱلرَّحْمَٰنِ ٱلرَّحِيمِ
قسم ہے اُن (گھوڑوں) کی جو پھنکارے مارتے ہوئے دوڑتے ہیں وَٱلْعَٰدِيَٰتِ ضَبْحًا۝۱
پھر (اپنی ٹاپوں سے) چنگاریاں جھاڑتے ہیں فَٱلْمُورِيَٰتِ قَدْحًا ۝۲
پھر صبح سویرے چھاپہ مارتے ہیں فَٱلْمُغِيرَٰتِ صُبْحًا ۝۳
پھر اس موقع پر گرد و غبار اڑاتے ہیں فَأَثَرْنَ بِهِۦ نَقْعًا ۝۴
پھر اِسی حالت میں کسی مجمع کے اندر جا گھستے ہیں فَوَسَطْنَ بِهِۦ جَمْعًا ۝۵
حقیقت یہ ہے کہ انسان اپنے رب کا بڑا ناشکرا ہے إِنَّ ٱلْإِنسَٰنَ لِرَبِّهِۦ لَكَنُودٌ ۝۶
اور وہ خود اِس پر گواہ ہے وَإِنَّهُۥ عَلَىٰ ذَٰلِكَ لَشَهِيدٌ ۝۷
اور وہ مال و دولت کی محبت میں بری طرح مبتلا ہے وَإِنَّهُۥ لِحُبِّ ٱلْخَيْرِ لَشَدِيدٌ ۝۸
تو کیا وہ اُس حقیقت کو نہیں جانتا جب قبروں میں جو کچھ (مدفون) ہے اُسے نکال لیا جائے گا أَفَلَا يَعْلَمُ إِذَا بُعْثِرَ مَا فِى ٱلْقُبُورِ ۝۹
اور سینوں میں جو کچھ (مخفی) ہے اُسے برآمد کر کے اس کی جانچ پڑتال کی جائے گی؟ وَحُصِّلَ مَا فِى ٱلصُّدُورِ ۝۱۰
یقیناً اُن کا رب اُس روز اُن سے خوب باخبر ہوگا إِنَّ رَبَّهُم بِهِمْ يَوْمَئِذٍ لَّخَبِيرٌۢ ۝۱۱