اللہ کے نام سے جو رحمان و رحیم ہے بِسْمِ ٱللَّهِ ٱلرَّحْمَٰنِ ٱلرَّحِيمِ
قسم ہے تارے کی جبکہ وہ غروب ہوا وَٱلنَّجْمِ إِذَا هَوَىٰ۝۱
تمہارا رفیق نہ بھٹکا ہے نہ بہکا ہے مَا ضَلَّ صَاحِبُكُمْ وَمَا غَوَىٰ ۝۲
وہ اپنی خواہش نفس سے نہیں بولتا وَمَا يَنطِقُ عَنِ ٱلْهَوَىٰٓ ۝۳
یہ تو ایک وحی ہے جو اُس پر نازل کی جاتی ہے إِنْ هُوَ إِلَّا وَحْىٌ يُوحَىٰ ۝۴
اُسے زبردست قوت والے نے تعلیم دی ہے عَلَّمَهُۥ شَدِيدُ ٱلْقُوَىٰ ۝۵
جو بڑا صاحب حکمت ہے ذُو مِرَّةٍ فَٱسْتَوَىٰ ۝۶
وہ سامنے آ کھڑا ہوا جبکہ وہ بالائی افق پر تھا وَهُوَ بِٱلْأُفُقِ ٱلْأَعْلَىٰ ۝۷
پھر قریب آیا اور اوپر معلق ہو گیا ثُمَّ دَنَا فَتَدَلَّىٰ ۝۸
یہاں تک کہ دو کمانوں کے برابر یا اس سے کچھ کم فاصلہ رہ گیا فَكَانَ قَابَ قَوْسَيْنِ أَوْ أَدْنَىٰ ۝۹
تب اُس نے اللہ کے بندے کو وحی پہنچائی جو وحی بھی اُسے پہنچانی تھی فَأَوْحَىٰٓ إِلَىٰ عَبْدِهِۦ مَآ أَوْحَىٰ ۝۱۰
نظر نے جو کچھ دیکھا، دل نے اُس میں جھوٹ نہ ملایا مَا كَذَبَ ٱلْفُؤَادُ مَا رَأَىٰٓ ۝۱۱
اب کیا تم اُس چیز پر اُس سے جھگڑتے ہو جسے وہ آنکھوں سے دیکھتا ہے؟ أَفَتُمَٰرُونَهُۥ عَلَىٰ مَا يَرَىٰ ۝۱۲
اور ایک مرتبہ پھر اُس نے وَلَقَدْ رَءَاهُ نَزْلَةً أُخْرَىٰ ۝۱۳
سدرۃالمنتہیٰ کے پاس اُس کو دیکھا عِندَ سِدْرَةِ ٱلْمُنتَهَىٰ ۝۱۴
جہاں پاس ہی جنت الماویٰ ہے عِندَهَا جَنَّةُ ٱلْمَأْوَىٰٓ ۝۱۵
اُس وقت سدرہ پر چھا رہا تھا جو کچھ کہ چھا رہا تھا إِذْ يَغْشَى ٱلسِّدْرَةَ مَا يَغْشَىٰ ۝۱۶
نگاہ نہ چوندھیائی نہ حد سے متجاوز ہوئی مَا زَاغَ ٱلْبَصَرُ وَمَا طَغَىٰ ۝۱۷
اور اس نے اپنے رب کی بڑی بڑی نشانیاں دیکھیں لَقَدْ رَأَىٰ مِنْ ءَايَٰتِ رَبِّهِ ٱلْكُبْرَىٰٓ ۝۱۸
اب ذرا بتاؤ، تم نے کبھی اِس لات، اور اِس عزیٰ أَفَرَءَيْتُمُ ٱللَّٰتَ وَٱلْعُزَّىٰ ۝۱۹
اور تیسری ایک اور دیوی منات کی حقیقت پر کچھ غور بھی کیا؟ وَمَنَوٰةَ ٱلثَّالِثَةَ ٱلْأُخْرَىٰٓ ۝۲۰
کیا بیٹے تمہارے لیے ہیں اور بیٹیاں خدا کے لیے؟ أَلَكُمُ ٱلذَّكَرُ وَلَهُ ٱلْأُنثَىٰ ۝۲۱
یہ تو بڑی دھاندلی کی تقسیم ہوئی! تِلْكَ إِذًا قِسْمَةٌ ضِيزَىٰٓ ۝۲۲
دراصل یہ کچھ نہیں ہیں مگر بس چند نام جو تم نے اور تمہارے باپ دادا نے رکھ لیے ہیں اللہ نے اِن کے لیے کوئی سند نازل نہیں کی حقیقت یہ ہے کہ لوگ محض وہم و گمان کی پیروی کر رہے ہیں اور خواہشات نفس کے مرید بنے ہوئے ہیں حالانکہ اُن کے رب کی طرف سے اُن کے پاس ہدایت آ چکی ہے إِنْ هِىَ إِلَّآ أَسْمَآءٌ سَمَّيْتُمُوهَآ أَنتُمْ وَءَابَآؤُكُم مَّآ أَنزَلَ ٱللَّهُ بِهَا مِن سُلْطَٰنٍ ۚ إِن يَتَّبِعُونَ إِلَّا ٱلظَّنَّ وَمَا تَهْوَى ٱلْأَنفُسُ ۖ وَلَقَدْ جَآءَهُم مِّن رَّبِّهِمُ ٱلْهُدَىٰٓ ۝۲۳
کیا انسان جو کچھ چاہے اس کے لیے وحی حق ہے أَمْ لِلْإِنسَٰنِ مَا تَمَنَّىٰ ۝۲۴
دنیا اور آخرت کا مالک تو اللہ ہی ہے فَلِلَّهِ ٱلْءَاخِرَةُ وَٱلْأُولَىٰ ۝۲۵
آسمانوں میں کتنے ہی فرشتے موجود ہیں، اُن کی شفاعت کچھ بھی کام نہیں آ سکتی جب تک کہ اللہ کسی ایسے شخص کے حق میں اُس کی اجازت نہ دے جس کے لیے وہ کوئی عرضداشت سننا چاہے اور اس کو پسند کرے وَكَم مِّن مَّلَكٍ فِى ٱلسَّمَٰوَٰتِ لَا تُغْنِى شَفَٰعَتُهُمْ شَيْـًٔا إِلَّا مِنۢ بَعْدِ أَن يَأْذَنَ ٱللَّهُ لِمَن يَشَآءُ وَيَرْضَىٰٓ ۝۲۶
مگر جو لوگ آخرت کو نہیں مانتے وہ فرشتوں کو دیویوں کے ناموں سے موسوم کرتے ہیں إِنَّ ٱلَّذِينَ لَا يُؤْمِنُونَ بِٱلْءَاخِرَةِ لَيُسَمُّونَ ٱلْمَلَٰٓئِكَةَ تَسْمِيَةَ ٱلْأُنثَىٰ ۝۲۷
حالانکہ اس معاملہ کا کوئی علم انہیں حاصل نہیں ہے، وہ محض گمان کی پیروی کر رہے ہیں، اور گمان حق کی جگہ کچھ بھی کام نہیں دے سکتا وَمَا لَهُم بِهِۦ مِنْ عِلْمٍ ۖ إِن يَتَّبِعُونَ إِلَّا ٱلظَّنَّ ۖ وَإِنَّ ٱلظَّنَّ لَا يُغْنِى مِنَ ٱلْحَقِّ شَيْـًٔا ۝۲۸
پس اے نبیؐ، جو شخص ہمارے ذکر سے منہ پھیرتا ہے، اور دنیا کی زندگی کے سوا جسے کچھ مطلوب نہیں ہے، اُسے اس کے حال پر چھوڑ دو فَأَعْرِضْ عَن مَّن تَوَلَّىٰ عَن ذِكْرِنَا وَلَمْ يُرِدْ إِلَّا ٱلْحَيَوٰةَ ٱلدُّنْيَا ۝۲۹
اِن لوگوں کا مبلغ علم بس یہی کچھ ہے، یہ بات تیرا رب ہی زیادہ جانتا ہے کہ اُس کے راستے سے کون بھٹک گیا ہے اور کون سیدھے راستے پر ہے ذَٰلِكَ مَبْلَغُهُم مِّنَ ٱلْعِلْمِ ۚ إِنَّ رَبَّكَ هُوَ أَعْلَمُ بِمَن ضَلَّ عَن سَبِيلِهِۦ وَهُوَ أَعْلَمُ بِمَنِ ٱهْتَدَىٰ ۝۳۰
اور زمین اور آسمانوں کی ہر چیز کا مالک اللہ ہی ہے تاکہ اللہ برائی کرنے والوں کو ان کے عمل کا بدلہ دے اور اُن لوگوں کو اچھی جزا سے نوازے جنہوں نے نیک رویہ اختیار کیا ہے وَلِلَّهِ مَا فِى ٱلسَّمَٰوَٰتِ وَمَا فِى ٱلْأَرْضِ لِيَجْزِىَ ٱلَّذِينَ أَسَٰٓـُٔوا۟ بِمَا عَمِلُوا۟ وَيَجْزِىَ ٱلَّذِينَ أَحْسَنُوا۟ بِٱلْحُسْنَى ۝۳۱
جو بڑے بڑے گناہوں اور کھلے کھلے قبیح افعال سے پرہیز کرتے ہیں، الا یہ کہ کچھ قصور اُن سے سرزد ہو جائے بلاشبہ تیرے رب کا دامن مغفرت بہت وسیع ہے وہ تمھیں اُس وقت سے خوب جانتا ہے جب اُس نے زمین سے تمہیں پیدا کیا اور جب تم اپنی ماؤں کے پیٹوں میں ابھی جنین ہی تھے پس اپنے نفس کی پاکی کے دعوے نہ کرو، وہی بہتر جانتا ہے کہ واقعی متقی کون ہے ٱلَّذِينَ يَجْتَنِبُونَ كَبَٰٓئِرَ ٱلْإِثْمِ وَٱلْفَوَٰحِشَ إِلَّا ٱللَّمَمَ ۚ إِنَّ رَبَّكَ وَٰسِعُ ٱلْمَغْفِرَةِ ۚ هُوَ أَعْلَمُ بِكُمْ إِذْ أَنشَأَكُم مِّنَ ٱلْأَرْضِ وَإِذْ أَنتُمْ أَجِنَّةٌ فِى بُطُونِ أُمَّهَٰتِكُمْ ۖ فَلَا تُزَكُّوٓا۟ أَنفُسَكُمْ ۖ هُوَ أَعْلَمُ بِمَنِ ٱتَّقَىٰٓ ۝۳۲
پھر اے نبیؐ، تم نے اُس شخص کو بھی دیکھا جو راہ خدا سے پھر گیا أَفَرَءَيْتَ ٱلَّذِى تَوَلَّىٰ ۝۳۳
اور تھوڑا سا دے کر رک گیا وَأَعْطَىٰ قَلِيلًا وَأَكْدَىٰٓ ۝۳۴
کیا اس کے پاس غیب کا علم ہے کہ وہ حقیقت کو دیکھ رہا ہے؟ أَعِندَهُۥ عِلْمُ ٱلْغَيْبِ فَهُوَ يَرَىٰٓ ۝۳۵
کیا اُسے اُن باتوں کی کوئی خبر نہیں پہنچی جو موسیٰؑ کے صحیفوں أَمْ لَمْ يُنَبَّأْ بِمَا فِى صُحُفِ مُوسَىٰ ۝۳۶
اور اُس ابراہیمؑ کے صحیفوں میں بیان ہوئی ہیں جس نے وفا کا حق ادا کر دیا؟ وَإِبْرَٰهِيمَ ٱلَّذِى وَفَّىٰٓ ۝۳۷
"یہ کہ کوئی بوجھ اٹھانے والا دوسرے کا بوجھ نہیں اٹھائے گا أَلَّا تَزِرُ وَازِرَةٌ وِزْرَ أُخْرَىٰ ۝۳۸
اور یہ کہ انسان کے لیے کچھ نہیں ہے مگر وہ جس کی اُس نے سعی کی ہے وَأَن لَّيْسَ لِلْإِنسَٰنِ إِلَّا مَا سَعَىٰ ۝۳۹
اور یہ کہ اس کی سعی عنقریب دیکھی جائے گی وَأَنَّ سَعْيَهُۥ سَوْفَ يُرَىٰ ۝۴۰
اور اس کی پوری جزا اسے دی جائے گی ثُمَّ يُجْزَىٰهُ ٱلْجَزَآءَ ٱلْأَوْفَىٰ ۝۴۱
اور یہ کہ آخر کار پہنچنا تیرے رب ہی کے پاس ہے وَأَنَّ إِلَىٰ رَبِّكَ ٱلْمُنتَهَىٰ ۝۴۲
اور یہ کہ اُسی نے ہنسایا اور اُسی نے رلایا وَأَنَّهُۥ هُوَ أَضْحَكَ وَأَبْكَىٰ ۝۴۳
اور یہ کہ اُسی نے موت دی اور اُسی نے زندگی بخشی وَأَنَّهُۥ هُوَ أَمَاتَ وَأَحْيَا ۝۴۴
اور یہ کہ اُسی نے نر اور مادہ کا جوڑا پیدا کیا وَأَنَّهُۥ خَلَقَ ٱلزَّوْجَيْنِ ٱلذَّكَرَ وَٱلْأُنثَىٰ ۝۴۵
ایک بوند سے جب وہ ٹپکائی جاتی ہے مِن نُّطْفَةٍ إِذَا تُمْنَىٰ ۝۴۶
اور یہ کہ دوسری زندگی بخشنا بھی اُسی کے ذمہ ہے وَأَنَّ عَلَيْهِ ٱلنَّشْأَةَ ٱلْأُخْرَىٰ ۝۴۷
اور یہ کہ اُسی نے غنی کیا اور جائداد بخشی وَأَنَّهُۥ هُوَ أَغْنَىٰ وَأَقْنَىٰ ۝۴۸
اور یہ کہ وہی شعریٰ کا رب ہے وَأَنَّهُۥ هُوَ رَبُّ ٱلشِّعْرَىٰ ۝۴۹
اور یہ کہ اُسی نے عاد اولیٰ کو ہلاک کیا وَأَنَّهُۥٓ أَهْلَكَ عَادًا ٱلْأُولَىٰ ۝۵۰
اور ثمود کو ایسا مٹایا کہ ان میں سے کسی کو باقی نہ چھوڑا وَثَمُودَا۟ فَمَآ أَبْقَىٰ ۝۵۱
اور اُن سے پہلے قوم نوحؑ کو تباہ کیا کیونکہ وہ تھے ہی سخت ظالم و سرکش لوگ وَقَوْمَ نُوحٍ مِّن قَبْلُ ۖ إِنَّهُمْ كَانُوا۟ هُمْ أَظْلَمَ وَأَطْغَىٰ ۝۵۲
اور اوندھی گرنے والی بستیوں کو اٹھا پھینکا وَٱلْمُؤْتَفِكَةَ أَهْوَىٰ ۝۵۳
پھر چھا دیا اُن پر وہ کچھ جو (تم جانتے ہی ہو کہ) کیا چھا دیا فَغَشَّىٰهَا مَا غَشَّىٰ ۝۵۴
پس اے مخاطب، اپنے رب کی کن کن نعمتوں میں تو شک کرے گا؟" فَبِأَىِّ ءَالَآءِ رَبِّكَ تَتَمَارَىٰ ۝۵۵
یہ ایک تنبیہ ہے پہلے آئی ہوئی تنبیہات میں سے هَٰذَا نَذِيرٌ مِّنَ ٱلنُّذُرِ ٱلْأُولَىٰٓ ۝۵۶
آنے والی گھڑی قریب آ لگی ہے أَزِفَتِ ٱلْءَازِفَةُ ۝۵۷
اللہ کے سوا کوئی اُس کو ہٹا نے والا نہیں لَيْسَ لَهَا مِن دُونِ ٱللَّهِ كَاشِفَةٌ ۝۵۸
اب کیا یہی وہ باتیں ہیں جن پر تم اظہار تعجب کرتے ہو؟ أَفَمِنْ هَٰذَا ٱلْحَدِيثِ تَعْجَبُونَ ۝۵۹
ہنستے ہو اور روتے نہیں ہو؟ وَتَضْحَكُونَ وَلَا تَبْكُونَ ۝۶۰
اور گا بجا کر انہیں ٹالتے ہو؟ وَأَنتُمْ سَٰمِدُونَ ۝۶۱
جھک جاؤ اللہ کے آگے اور بندگی بجا لاؤ فَٱسْجُدُوا۟ لِلَّهِ وَٱعْبُدُوا۟ السجدة